بیمار زمین – رملہ کامران

دھڑ سے دروازہ کھلا. احمد کھانستے ہوئے گھر میں داخل ہوا. بستہ ایک طرف پھینک کر وہ پانی پینے کی غرض سے سیدھا کچن میں گیا. “کیا ہوا تمہیں، آج تم اتنا کھانس کیوں رہے ہو؟؟” امی نے اسے کھانستے ہوئے آتا دیکھ کر پوچھا. “کچھ نہیں، دراصل اتنی گرمی تھی، ساتھ میں گاڑیوں کے دھویں نے سانس لینا بھی مشکل بنا دیا ہے میرا”.

احمد نے وضاحت دی. “یہ لو پانی پی لو. احمد نے امی کے ہاتھ سے گلاس لیا اور غٹاغٹ سارا پانی پی لیا. “امی یہ آجکل اتنا زیادہ دھواں اور ہر طرف کچرا کیوں ہے؟؟ “احمد نے امی سے پوچھا. “بیٹا کوئی بھی صفائی کا خیال نہیں رکھتا اور ہر کوئی اپنے گھر کا کچرا بھی باہر پھینک دیتا ہے.” امی نے اسکو مختصر سا جواب دینا ہی مناسب سمجھا. “اب تم جاؤ، جلدی سے فریش ہو کر آجاؤ، میں کھانا لگا دیتی ہوں “امی یہ بول کر ڈائننگ ٹیبل پر کھانا لگانے لگیں. ” پتہ ہے احمد، میری دادی کو سانس کی بیماری ہو گئی ہے”. اسکول میں اس کے سب سے قریبی دوست نے لنچ بریک میں اسے بتایا.” تمہیں پتہ ہے ہے یہ آجکل اتنی بیماریاں کیوں ہو رہی ہیں ہر جگہ”؟؟ عمر نے پہلی بار گفتگو میں حصہ لیتے ہوئے پوچھا. “میری امی نے بتایا تھا کہ کوئی بھی صفائی کا خیال نہیں رکھتا جس کی وجہ سے اتنی بیماریاں پھیل رہی ہیں”۔اسی وقت بریک ختم ہونے کی بیل بجی اور سب بچے اپنی جماعتوں میں جانے لگے۔احمد اور اس کے دوست بھی باتیں کرتے ہوے کلاس میں پہنچے تو دیکھا کہ سائنس کی استانی پہلے سے موجود تھیں.

“اسلام علیکم بچوں، کیسے ہیں سب؟؟” جب سارے بچے کلاس میں آگئے تو مس فائزہ نے سب کو سلام کیا۔جواب ملنے کے بعد انھوں نے بتایا کہ آج ہم اوزون کی تہہ کے بارے میں پڑھیں گے۔کیا کسی کو پتہ ہے کہ یہ کیا ہوتی ہے؟؟ مس فائزہ نے سب بچوں کی طرف دیکھتے ہوئے سوال کیا۔جب سب چپ رہے تو مس فائزہ نے خود ہی بتانا شروع کر دیا۔ ” یہ لیر سورج کے گرد وہ تہ ہے جو کہ سورج کی خطرناک بالائے بنفشی (ultra voilet) شعاؤں کو زمین کی طرف آنے سے روکتی ہے بلکہ زمین پر اس کے نقصان دہ اثرات کو بھی ختم کر دیتی ہے۔” ٹیچر وہ نقصان دہ اثرات کون سے ہیں؟؟”لائبہ نے سوال کیا۔ “ابھی رکو میں پہلے اپنی بات کو مکمل کر لوں لائبہ پھر بتاتی ہوں”مس فائزہ جواب دے کر واپس سب سے مخاطب ہوئیں اور کہنا شروع کیا …….” اچھا تو میں بتا رہی تھی کہ آجکل انسانوں نے جو کیمیائی مرکبات بناۓ ہیں اوزون کی تہہ میں شگاف کا باعث ہیں جسکی وجہ سے بالائے بنفشی(ultravoilet) شعائیں زمین پر پڑتیں ہیں اور زمینی مخلوقات کو بہت سے امراض میں مبتلا کرتیں ہیں۔

پتہ ہے بچوں اگر یہ تہہ پوری ختم ہو گئی تو زمین کا درجہ حرارت بہت زیادہ بڑھ جاۓ گا اور بہت سے شہر اسی سے تباہ ہو جائیں گے”
“ٹیچر کیمیائی مرکبات کیا ہوتے ہیں؟” ایک بچے نے سوال کیا. مس فائزہ نے مسکرا کر اسے دیکھا اور گویا ہوئیں.” گاڑیوں سے جو دھوئیں نکلتے ہیں،صنعتوں سے جو دھوئیں نکلتے ہیں،کچرا جلنے کے بعد جو دھواں نکلتا ہے وغیرہ۔۔ان سب میں کچھ کیمیکلز ہوتے ہیں جو ہوا میں مکس ہو کر اوزون لیر میں شگاف پیدا کرتے ہیں” ……”ٹیچر کیا آپ ہمیں اس سے بچنے کے طریقے بتائیں گیں؟؟”عمر نے کہا.
“ضرور، کیوں نہیں۔سب سے پہلے تو ہمیں زیادہ سے زیادہ پودے لگانے چاہیے،پیدل چلنے کی عادت،سائیکلوں پر آنے جانے کی کوشش کریں ۔گاڑیوں میں فلٹریشن سسٹم لگوائیں جو زہریلی گیس کو الگ کر کے صاف دھواں باہر نکالے۔کچڑا باہر پھینکنے سے گریز کریں کیونکہ اس کی وجہ سے بھی بہت سی بیماریاں جنم لیتی ہیں۔اگر ہم ان سب باتوں پر عمل کریں تو اس لیر میں موجود شگاف کو ختم کر سکتے ہیں۔”

مس فائزہ نے تفصیل سے بچوں کو بتایا. کلاس کا وقت ختم ہوگیا تھا.. سب بچے اگلی کلاس کی تیاری کرنے لگے.
آج احمد خوشی خوشی یہ سوچتے ہوئے گھر جا رہا تھا کہ اب سے وہ ان تمام باتوں پر عمل کر کے ان بیماریوں کو پھیلنے سے روکنے میں اپنا حصہ ادا کرے گا۔

Share:

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on pinterest
Share on linkedin
Share on email
Share on telegram
Share on skype

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Related Posts

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)