میں زمین ہوں – عروہ احمد

اسلام علیکم پیارے ساتھیو …… !میرا نام زمین ہے اور میں نظام شمسی کا تیسرا سیارہ ہوں.

مجھے رب کائنات نے بنایا ہے جب اس نے مجھے بنایا …….. تب میں بہت خوبصورت تھی . اللہ نے میرے اندر ہرے بھرے پیڑ پودے لگائے جو میرے آدھے حصے میں موجود تھے. میرے بڑے حصے میں سمندر بنایا اور تب میں بہت خوش تھی . اسی کے ساتھ اللہ نے میرے اردگرد ایک تہہ بنائی ……جس کا نام اوزون ہے جو مجھے سورج کی تیز کرن سے بچاتی ہے لیکن ایک دن اللہ نے انسان کو پیدا کیا جس نے میرے اندر بہت تباہی مچائی جس کی وجہ سے میرے اردگرد کی اوزون تہہ بھی ٹوٹ گئی ہے اور میں بھی بہت بوڑھی ہو گئی ہوں کہ کاش انسان مجھ پر اتنی تباہی نہ مچاتا کہ میری اوزون نہ ٹوٹ جاتی آج میرا یہ حال ہو چکا ہے کہ میرے اندر کی ہر جگہ زہریلی گیس اور دھوئیں سے بھر گئی ہے.

لیکن آج میں اپنے اندر دیکھ رہی ہوں کہ ایک چھوٹے سے وائرس کی وجہ سے سارے انسان اپنے گھروں میں بند ہیں۔ ریل گاڑیاں اور ہوائی جہاز بھی بند ہے جس کی وجہ سے میرے اندر زہریلی گیس کم ہورہی ہے تازہ ہوا کی مقدار بڑھ رہی ہے جس کی وجہ سے میرے اردگرد کی اوزون تہہ دوبارہ سے بن رہی ہے اور میں بہت خوش ہوں اور میں چاہتی ہوں کہ انسان اپنے گھروں میں اور تھوڑے دن بند رہیں اور فیکٹریاں اور کارخانے بھی بند رہیں تاکہ میری اوزون تہہ بن سکے اور میں دوبارہ سے سرسبز اور شاداب ہو سکوں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: