رب کے بندے رب کی مرضی – بنت شیروانی

کئی دنوں کے بعد اپنی دوست کے گھر جانا ہوا تو اس کے بچے ہم سے بہت ہی زیادہ گرمجوشی سے ملے……..

دوست سے زیادہ اس کے بچے ہمارے آنے پر خوشی کا اظہار کر رہے تھے…….. اس کے بڑے بیٹے نے چھولوں سے بھرا پیالہ ہماری خدمت میں پیش کیا اوران چھولوں کو پورا ختم کرنے کا اصرار کرنے لگا …….. ہمارے منع کرنے کے باوجود اس نے ختم کرا کر ہی دم لیا. کچھ لمحے بعد ہی دوست کی منجھلی بیٹی ایک بڑاcoffee سے بھرا مگا اٹھا کر لے آئی کہ خالہ……. میرے ہاتھ کی بنی coffee لیں بہت مزے کی ہے ہم نے بہت چاہا کہ اس coffe کو ہی کم کرادیں لیکن وہ بچی نہ مانی۰خیر نہ نہ کرتے ہوئے وہ coffee بی ہم نے ختم کی۰اس کے بعد ابھی کچھ دیر ہی نہ گزری تھی کہ دوست کا سب سے چھوٹا بیٹا آیا اور ہمارے ساتھ لنگڑی پالہ کھیلنے کی پرزور فرمائش کرنے لگا………

ہم منع کرتے رہ گۓ کہ خالہ اب وہ جوان نہیں رہیں …….! لیکن بچے نے تو ہمیں یہ کھیل کھیلنے پر ہی مجبور کیا اور ہم اس کے ساتھ لنگڑی پالہ کھیلنے لگے. ابھی بمشکل 5 منٹ ہی گزرے تھے کہ دوست کے سارے بچوں نے شور مچانا شروع کیا کہ خالہ ہماری ہمارے گھر دس دن کے لۓ رکیں گی۰اب تو ہم چکرا کر رہ گۓ کہ ماجرا کیا ہے؟؟ ہم اس سے پہلے بھی اس سے زیادہ کئی دنوں بعد آۓ ہیں لیکن اس طرح تو بچوں نے کبھی نہیں کیا….. ہم اسی حیرانی کیفیت سے نہیں نکلے تھے اور بچوں کو سمجھا رہے تھے کہ بچوں اگر ہم تمھارے گھر اتنے دن کے لۓ رک گۓ تو ہم پہنیں گے کیا ؟ ہمارے گھر کا refrigerator گندا ہوگیا ہے ……اس کون صاف کریگا کہ اتنے میں بچوں نے مل کر نعرہ لگایا “ہماری خالہ ہماری مہمان ہماری مرضی ” یہ سن کر تو ہمارا سر ہی چکرا کر رہ گیا اور ہم بھی بل آخر بول اٹھے”ہم رب کے بندے ہمارے اوپر ہمارے رب کی مرضی”

اور یہ کہ کر ہم نے اپنی دوست کی جانب مسکراتے ہوۓ کہا شکر کہ ہم رب کی مرضی کو سمجھنے لگے ورنہ ہماری مرضی” میں صرف اپنی مرضی کے تحت ہی زندگی گزار کر ہم خود اپنی اور دوسروں کی زندگیوں کو مشکل میں ہی ڈالتے۰

یہ سن کر ہماری دوست بھی مسکراۓ بنا نہ رہ سکی۰

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: