پاکستان کا خوف ،بھارتی شخصیات پاکستانی میڈیا کا سامنا کرنے سے گریزاں

بھارت سرحدی کشیدگی بڑھتی جا رہی ہے ۔ بھارت کی جانب سے مسلسل جارحانہ رویہ اختیار کرنے پر پاکستان نے بھی بھرپور تیاری کر لی ہے ۔ دوسری جانب بھارتی میڈیا نے سکرین پر جنگ و جدل کا ماحول بنا رکھا ہے ۔ سنسنی خیز رپورٹس، مضحکہ خیز پیکجز اور جنگ کی دھمکیاں بھارتی میڈیا کی نشریات کا مرکزی حصہ بن چکی ہیں۔دوسری جانب پاکستان کے منہ توڑجواب کے بعد بھارت کی بولتی بند ہو چکی ہے خوف کی فضا نے نہ صرف بھارتی فوج بلکہ بھارتی میڈیا کو بھی حصار میں لے رکھا ہے۔اپنے چینلز پر بڑھ چڑھ کر بڑھکیں مارنے والے بھارتی میڈیا کے کرتا دھرتا بھی خوفزدہ ہوچکے ہیں۔ نمایاں بھارتی جرنیل اور صحافیوں نے لائیو شو میں آنے سے انکار کر دیا ہے۔

دوسری جانب بھارت کے جنگی جنون اور دھمکی آمیز رویے پرپاکستان نے واضح اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ صورتحال کشیدہ ہوئی تومغربی سرحدسے فوجیں مشرقی سرحدپرلگائیں گے۔ سفارتی ذرائع کا کہنا تھا کہ خوف کی فضاء نہیں چاہتے۔بھارت کےساتھ موجودہ حالات میں خطرات موجودہیں۔جنگ مسلط ہوئی تو بھرپور جواب دینے کیلئے تیارہیں۔ موجودہ حالات میں و کرتارپور جیسے اقدامات کو خطرہ لاحق ہے۔پاکستان کےدوست ممالک سے رابطے جاری ہیں۔ دوست ممالک کی اخلاقی اور سیاسی حمایت درکارہے ۔ انکا مزید کہنا تھا کہ دوست ممالک پاکستان کےساتھ کھڑے ہیں۔بھارت نےسرجیکل اسٹرائیک کےبھی شواہدآج تک نہیں دیئے۔بھارت کی طرف سے سنجیدگی کا مظاہرہ کیا جانا چاہیے ۔

پاکستانی ہائی کمشنر تاحال پاکستان میں ہی موجودہیں۔ بھارتی ہائی کمشنر اجے ساریہ بھی ابھی تک بھارت میں ہیں ۔ دوسری جانب پاک بھارت کشیدگی کے مد نظر دفترخارجہ نے کرائسس مینجمنٹ سیل قائم کردیا ہے۔ دفتر خارجہ کے مطابق وزارت خارجہ کا کرائسس مینجمنٹ سیل 24 گھنٹےکام کرے گا ۔ کرائسس مینجمنٹ سیل سفارتی رابطوں اور سرحدوں کی صورتحال پر رابطے میں رہے گا تاکہ کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے قبل از وقت قدم اٹھایا جا سکے۔

Share:

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on pinterest
Share on linkedin
Share on email
Share on telegram
Share on skype

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Related Posts

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)