جب جنرل مشرف نے مجھے باحجاب دیکھا

’’میں نے جس گھرانے میں آنکھ کھولی، وہاں حجاب لباس کا حصہ سمجھا جاتا ہے۔ سو شروع ہی سے حجاب لیا۔ ہاں! شعوری طور پر حجاب کی سمجھ جب آئی جب خود قرآن کو اپنی آنکھوں سے پڑھنا ، سمجھنا اور پڑھانا شروع کیا۔ ہم جس ماحول میں پروان چڑھے، وہاں حیا اور حجاب ہماری گھٹی میں ڈالا گیا تھا۔

سوالحمدللہ ! کبھی حجاب بوجھ نہیں لگا اور حجاب کی وجہ سے کبھی کوئی پریشانی یا رکاوٹ نہیں آئی، بلکہ میرا تجربہ قران کی اس آیت کے مترادف رہا .
’’ تاکہ تم پہچان لی جاؤ اور ستائی نہ جاؤ‘‘الحمدللہ! حجاب نے میری راہ میں کبھی کوئی مشکل نہیں کھڑی کی بلکہ میں نے اس کی بدولت ہرجگہ عزت اور احترام پایا۔ اک واقعہ سنانا چاہوں گی، پرویز مشرف دور میں پاک فوج کی ’ایکسپو2001‘ منعقد ہوئی تھی۔ یہ ایک بڑی گیدرنگ تھی۔ اس کی تقریب میں واحد باحجاب میں ہی تھی، کچھ خواتین (آفیسرز کی بیگمات) نے اشاروں کنایوں میں احساس دلایا کہ ایسی جگہوں پر حجاب کی کیا ضرورت ؟ میں مسکرا دی۔

کچھ دیر میں جنرل مشرف خواتین سے سلام کرنے لگے، خواتین جاتیں، ان سے ہاتھ ملاتیں، ان کے ساتھ تصاویر بنواتیں ۔ میں کچھ اندر سے گھبرائی ہوئی تھی ۔ اسی اثنا میں جنرل مشرف میری جانب مڑے، مجھے حجاب میں دیکھا تو اپنے دونوں ہاتھ کمر پر باندھ لیے اور جاپانیوں کے طریقہ سلام کی طرح تین بار سرجھکا کر سلام کیا ۔ خواتین کا مجمع میری جانب حیرت سے تک رہا تھا۔ میری آنکھوں میں نمی اور فضاؤں میں میرے رب کی گونج سنائی دے رہی تھی . ’’تاکہ تم پہچان لی جاؤ اور ستائی نہ جاؤ‘‘

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چھلی والے تیرے ایمان کو سلام

یہ سڑک کے کنارے کھڑا سترہ اٹھارہ برس کا چھلی والا تھا ہم نے بھی چھلی لینے کے ارادے سے گاڑی روکی اک چھلی بنانے کا کہہ شیشہ اوپر کرنے ہی لگے تھے کہ اس کے ساتھ دو اسی عمر کے لڑکے ( ایک پینٹ بابو تھا اور دوسرا اس جیسا ہی مگر اس سے زرا بڑا اور شاید ہندو جو اسکی باتوں سے لگا ) اور اسکے درمیان ہونے
والی گفتگو جو کان میں پڑی تو ہاتھ وہیں رک گئےگفتگو کیا تھی ایمان کے لیول تھے جو جس میں جتنے اندر تھے اتنے ہی باہر چھلک رہے تھے ۔۔۔۔۔۔آپ بھی سنئیے ۔۔
مزید پڑھئے

Share:

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on pinterest
Share on linkedin
Share on email
Share on telegram
Share on skype

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Related Posts

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)