میں ہوں بارش ۲۰١۹ کی – سیدہ ابیحہ مریم

مون سون کا موسم تھا. میں دنیا بھر میں اور خصوصاً پاکستان میں ہر جگہ جا رہی تھی لیکن کراچی کی باری اب تک نہ آئی تھی. مگر پھر ۹ اگست ۲۰١۹ کی شام سے وہاں بھی خوبصورت موسم, گرجتے بادلوں اور چمکتی بجلی کا راج تھا. بچّہ بچّہ یہ نعرے لگاتا نظر آ رہا تھا,
“اللہ میاں پانی دیں, سو برس کی نانی دیں”

تمام بچّے بڑے اس شام موسم سے لطف اندوز ہو رہے تھے اور میں آسمان سے منظر دیکھ رہی تھی . کراچی والوں کو میری آمد کی خوشخبری ملی اور مجھے اللہ کی طرف سے برسنے کا حکم. .. بس پھر کیا تھا … اسکول میں موجود طلباء , دفتر میں موجود مرد حضرات اور باورچی خانے میں کام کرتی خواتین … سب ہی کے چہرے دمک اٹھے . وقت کے ساتھ میں نے اپنی رفتار بڑھا دی . بجلی تو پہلے ہی قطرے کے ساتھ غائب ہو گئی تھی اور اب تو میرے برسنے پر انجانے زمینی کیڑے بھی باہر آ گئے . میں کراچی میں اس قدر تیز رفتاری سے کئی برس بعد برسی تھی . بجلی , کیڑے یا میری رفتار … کسی بھی چیز کی پرواہ کیئے بغیر کراچی والوں نے مجھ سے خوب لطف اٹھایا . اکثر دادیاں اور نانیاں “رحمت کی بارش” کی دعائیں کر رہی تھیں . لوگ گھومنے کے لیئے گھروں سے باہر بھی گئے . سموسے پکوڑے اور چائے کافی کے ادوار چلے اور دوستوں میں دعوتیں ہوئیں. البتّہ میری وجہ سے کئی پروگرامات بھی معطّل ہوئے کیونکہ میری آمد کے دوران کراچی کی مخدوش سڑکوں پر سفر کرنا کسی چیلنج سے کم نہیں تھا.

ارے میری یہ باتیں سن کر آپ پریشان تو نہیں ہو رہے کراچی والوں… ؟؟ میں ہر گز آپ کو مزے لینے سے نہیں روک رہی بلکہ آپ ضرور مجھ سے لطف اٹھایا کیجیئے . بس … اس بات کا خیال رکھا کریں کہ جب میں برسنا شروع کروں تو آپ اپنی گاڑیوں کی رفتار کم کر لیں. بچّے گیلے فرش پر نہ بھاگیں اور بجلی کے کھنبوں سے بھی فاصلہ اختیار کریں, اور خوش رہیں!!!

Share:

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on pinterest
Share on linkedin
Share on email
Share on telegram
Share on skype

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Related Posts

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)