دسمبر پھر دسمبر ہے

 

دسمبر پھر دسمبر ہے
دسمبر کو تم کیا جانو ؟
یہ مہکتی رات کے منظر
یہ دھندلے شام کی ٹھنڈک
یہ اڑتے بادلوں کی سرگوشی
یہ عجب انداز ہے اسکا
دلکش راز ہے اسکا
شہلا یہ دعاؤں کا

دسمبر ہے

یادوں کا سفینہ ہے

خوابوں کی آہٹ ہے
امیدوں کا دریچہ
یہ میرا دسمبر ہے
تمہارا دسمبر ہے

Share:

Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on pinterest
Share on linkedin
Share on email
Share on telegram
Share on skype

2 Comments

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Related Posts

error

Enjoy this blog? Please spread the word :)